Monday 21 August, 2017

پرویز مشرف نے زندگی کی 73 بہاریں دیکھ لیں


دبئی: (کوہ نور نیوز) تفصیلات کے مطابق جنرل (ر) 11 اگست 1943 کو برطانوی راج کے دوران بھارت کے شہر دہلی میں پیدا ہوئے، 14 اگست 1947 کی تقسیم کے بعد اپنے والدین کے ہمراہ پاکستان کے دارالحکومت کراچی منتقل ہوئے۔ پرویزمشرف نے اپنی ابتدائی تعلیم کراچی سے حاصل کی تاہم مزید تعلیم حاصل کرنے کے لیے لاہور کے فورمین کرسچن کالج میں داخلہ لیا اور پھر رائل کالج آف ڈیفنس میں مزید تعلیم حاصل کی۔ جنرل (ر) پرویز مشرف نے 1961 میں پاکستان ملٹری اکیڈمی میں داخلہ حاصل کیا اور اپنی صلاحیتوں کی بنیاد پر باقاعدہ پاک فوج کا حصہ بن گئے، بعد ازاں 1964 میں ہونے والے افغان جہاد میں اپنا کلیدی کردار بھی ادا کیا۔ آپ نے 1964 میں ہونے والی پاک بھارت جنگ میں سیکنڈ لیفٹیننٹ کی حیثیت سے حصہ لیا اور دیگر جوانوں کے ہمراہ مل کر مادرِ وطن کا دفاع بھی کیا، بعد ازاں 1980 میں آرٹلری بریگیڈ میں ترقی ملی اور پھر 1990 میں ایک اور ترقی حاصل کر کے میجر جنرل کے عہدے تک پہنچے۔ جنرل (ر) پرویز مشرف کو نوازشریف نے 1998 اکتوبر میں پاک فوج کا سربراہ منتخب کیا اور پھر 1999 میں سابق (ر) سپہ سالار نے ملک میں مارشل لاء نافذ کرتے ہوئے اُس وقت کے وزیراعظم کو گرفتار کیا۔ بارہ اکتوبر 1999 سے 2002 تک مشرف نے ملکی سربراہ کی حیثیت سے امور سرانجام دیے بعد ازاں نگراں وزیراعظم منتخب ہونے کے بعد سابق آرمی چیف نے 20 جون 2001 کو پاکستان کے 10ویں صدر کی حیثیت سے عہدے کا حلف اٹھایا اور 8 سال بعد یعنی 2008 میں آپ کا صدارتی سفر اختتام پذیر ہوا۔ بعد ازاں پرویز مشرف نے ملک کی عملی سیاست میں حصہ لینے کے لیے آل پاکستان مسلم لیگ جماعت بنا کر سیاسی میدان میں اترنے کا اعلان کیا اور آپ کی جماعت نے 2013 کے عام انتخابات میں حصہ بھی لیا۔ آل پاکستان مسلم لیگ کے سربراہ کی 73ویں سالگرہ کے موقع پر اُن کے کارکنان اور مداحوں نے نیک خواہشات کا اظہار کیا۔

پروگرام گائیڈ