Saturday 16 December, 2017

نوازشریف کی معاون وکیل کی دستاویزات ریکارڈ سے خارج کرنے کی استدعا مسترد


اسلام آباد: (کوہ نور نیوز) اسلام آباد کی احتساب عدالت نے العزیزیہ سٹیل مل ریفرنس میں پیش کردہ دستاویزات کیخلاف اعتراضات پر مبنی معاون وکیل صفائی کی درخواست خارج کر دی۔ بینک افسر کی جانب سے جمع دستاویزات ریکارڈ کا حصہ بنا دی گئیں۔ سابق وزیراعظم نوازشریف کی معاون وکیل عائشہ حامد نے بینک افسر نورین شہزاد کی جانب سے پیش کردہ دستاویزات پراعتراض عائد کیا اور دستاویزات کیخلاف درخواست میں موقف اختیار کیا ہے کہ نورین شہزاد کا نام گواہوں میں شامل نہیں، وہ کس حیثیت میں دستاویزات پیش کر رہی ہیں، نورین شہزاد اپنے ادارے کا اتھارٹی لیٹر پیش کرنے میں نا کام رہی، ان دستاویزات کو ریکارڈ حصہ نہیں بنایا جاسکتا، دستاویزات کو ریکارڈ سے خارج کیا جائے، نورین شہزاد کو پیش کرنے سے پہلے نوٹس نہیں کیا، گزشتہ روز بھی یہ خاتون عدالت میں موجود تھی مگر ہمیں نہیں بتایا گیا۔ نیب پراسیکیوٹرنے کہا کہ اب بینک کی مینیجر نورین شہزاد ہیں، انکی دستاویزات کو بھی ریکارڈ کا حصہ بنایا جائے، احتساب عدالت نے معاون وکیل صفائی کی اعتراضات پر مبنی درخواست خارج کرتے ہوئے بینک افسر نورین شہزاد کی پیش کردہ دستاویزات کو ریکارڈ کا حصہ بنانے کا حکم دے دیا۔

پروگرام گائیڈ