چینی مارشل آرٹ وُوشو افغان لڑکیوں میں مقبول ہونے لگا

کابل (کوہ نور نیوز) افغانستان کی لڑکیاں کسی سے کم نہیں، ہمت اور حوصلے کی مثال قائم کرنے والی ان لڑکیوں کے جوش نے سخت سردی کو پیچھے دھکیل دیا ہے۔ وُوشو چینی مارشل آرٹ کی ایک قسم ہے جو بیک وقت ایک کھیل اور بغیر کسی ہتھیار کے اپنا دفاع کرنے کا فن بھی ہے افغان نوجوان لڑکیاں اِس کھیل میں غیر معمولی دلچسپی لے رہی ہیں۔افغانستان کے دارالحکومت کابل میں اِس آرٹ کی تربیت سیما اعظمی دیتی ہیں، حال ہی میں سیما اعظمی نے نوجوان لڑکیوں کو کھلے موسم میں وُوشو کی خصوصی تربیت دی۔ اس تربیتی عمل کے دوران تمام لڑکیوں کے سر بھی پوری طرح حجاب سے ڈھکے ہوئے تھے۔ معاشرتی تجزیہ کاروں کا کہنا ہے کہ یہ کھیل اور فن سیکھنے سے افغان لڑکیوں میں معاشرتی آزادی اور مردوں کے زیر اثر معاشرے میں کسی حد تک سر اٹھا کر چلنے اور جینے کی ہمت پیدا ہو سکتی ہے۔