غریب بچیوں کا 'بون میرو' نکالنے والاگروہ بے نقاب، خاتون سمیت ملزمان گرفتار

حافظ آباد: (کوہ نور نیوز) تفصیلات کے مطابق تھانہ سٹی پولیس کو مخبری ہوئی کہ محلہ شریف پورہ کے رہائشی ندیم جو خود کو ڈی ایچ کیو ہسپتال کا ملازم ظاہر کرتا ہے نے گلہ شیلر والا کسوکی روڈ کے رہائشی محمد اسلم ہنجرا اور اس کی بیوی آمنہ بی بی کے گھر میں اپنا دھندا شروع کر رکھا ہے جو غریب گھرانوں کی ان پڑھ نوجوان لڑکیوں کو جہیز پیکیج کا جھانسہ دیکر ورغلاتے اور ان کے میڈیکل سیمپل کی آڑ میں ریڑھ کی ہڈی کے مخصوص مقام سے بون میرو اور دیگر قیمتی مواد سرنج کے ذریعے نکال کر آگے فروخت کرتے ہیں، جس پر پولیس نے فوری چھاپہ مار کر آمنہ بی بی زوجہ محمد اسلم کو گرفتار کر لیا جبکہ ندیم اقبال، عرفان اور اسلم وغیرہ مواد سے بھری سرنجیں اور متعلقہ سامان چھوڑ کر فرار ہو گئے۔ متاثرہ بچی (ک) کے والد سرفراز احمد کی درخواست پر پولیس تھانہ سٹی نے چار ملزموں کیخلاف مقدمہ درج کر لیا۔ ذرائع کے مطابق ملزمہ آمنہ بی بی نے انکشاف کیا کہ وہ ایک گروہ کی شکل میں یہ دھندا طویل عرصہ سے کر رہے ہیں اور اب تک 90 کے قریب غریب لڑکیوں کے جسم سے مواد نکالا جا چکا ہے۔ ذرائع کے مطابق متاثرہ لڑکیاں شدید جسمانی تکلیف میں مبتلا ہیں اور علاج معالجہ کے باوجود تندرست ہونے کے بجائے مزید لاغر اور نیم اپاہج ہو چکی ہیں۔ دریں اثنا گرفتار ملزمہ کی نشاندہی پر پولیس نے گروہ کے متعدد ارکان کو گرفتار کرکے نامعلوم مقام پر منتقل کر دیا۔ پولیس ترجمان کے مطابق تفتیش جاری ہے اور بہت جلد اصل حقائق سامنے لائے جائینگے۔